ملک بھر میں ایک بار پھر آٹے کے بحران کا خدشہ

بی بی سی ریکارڈ لندن نیوز؛ کراچی

پاکستان فلور ملز ایسوسی ایشن نے ٹرن اوور ٹیکس اور چوکر پرسیلز ٹیکس عائد کرنے کے خلاف 23 جون کو آٹے کی سپلائی بند اور 30 جون سے ملک بھر کی فلور ملوں کو غیر معینہ مدت کے لیے بند کرنے کا اعلان کیا ہے۔ پاکستان فلورملز ایسوسی ایشن کے چیئرمین چوہدری محمد یوسف نے پریس کانفرنس میں ٹیکس عائد کیے جانے پر احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ 23 جون سے آٹے کی سپلائی بند کردیں گے جب کہ 24 جون سے دو روزہ ٹوکن ہڑتال کی جائے گی۔

چیئرمین چوہدری محمد یوسف نے حکومت پر واضح کیا ہے کہ اگر ٹوکن ہڑتال کے باوجود مطالبات تسلیم نہ کیے گئے تو ملک بھر کی فلورملیں 30 جون سے غیرمعینہ مدت کے لیے ہڑتال پر چلی جائیں گی۔ حکومت کی مسائل حل کرنے میں عدم دلچسپی کے باعث ہڑتال کے لیے مجبور ہوئے۔

انہوں نے بتایا کہ فلور ملوں پر ٹرن اوور ٹیکس کی شرح بھی 0.2 سے بڑھا کر 1.25 فیصد کردی گئی۔ ان ٹیکسوں سے عام آدمی کی جیب پر بوجھ بڑھ جائے گا اس لیے یہ ٹیکس فی الفور واپس لیئے جائیں۔ایک سوال کے جواب میں چوہدری یوسف نےبتایا کہ مقامی ضروریات پوری کرنے کے لیے اگست میں فوری طور پر 30 سے 40 لاکھ ٹن گندم درآمد کرنا ضروری ہے کیونکہ ملک میں آٹے کی سالانہ کھپت 30 ملین ٹن تک پہنچ گئی ہے۔

About BBC RECORD

Check Also

لاہور میں سی ٹی ڈی کی کارروائی، 4 مبینہ دہشت گرد گرفتار

Share this on WhatsAppلاہور: کاؤنٹر ٹیررازم ڈپارٹمنٹ (سی ٹی ڈی) نے موہلنوال کے علاقے میں ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے