یمن: حوثی ملیشیا کی یونیسف کے حوالے سے بلیک میلنگ، اساتذہ کی مالی امداد رُک گئی

یمن میں باغی حوثی ملیشیا نے اقوام متحدہ کی ذیلی تنظیم کو "یونیسف” کو مالی امداد خرچ کرنے سے رک جانے پر مجبور کر دیا۔ تنظیم یہ رقم حوثیوں کے زیر کنٹرول علاقوں میں متعدد منصوبوں میں خرچ کر رہی تھی۔یمنی نیوز ایجنسی "خبر: نے محکمہ تعلیم کے ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ حوثی ملیشیا نے یونیسف کو اُس مالی امداد کے خرچ کرنے سے روک دیا جو تنظیم نے ملیشیا کے زیر قبضہ دیہی علاقوں میں مرد اور خواتین اساتذہ کی تنخواہوں اور دیگر الاؤنسز کے واسطے مختص کی تھی۔

مذکورہ ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ حوثی ملیشیا کے ایک کمانڈر احمد حامد عُرف "ابو محفوظ” نے یونیسف تنظیم کو مالی امداد خرچ کرنے کا سلسلہ جاری رکھنے کی اجازت دینے کے مقابل اقوام متحدہ کی ذیلی تنظیم سے ایک بڑی رقم کا مطالبہ کیا تھا۔ذرائع نے واضح کیا کہ یونیسف نے حوثی کمانڈر کو کسی بھی قسم کی مالی رقوم دینے سے معذرت کر لی۔ اس کے نتیجے میں تنظیم کو مالی رقوم تقسیم کرنے اور مالی امداد خرچ کرنے سے روک دیا گیا۔ یونیسف کی جانب سے مختص رقم میں بعض اسکولوں کی دوبارہ بحالی بھی شامل ہے۔

ذرائع کے مطابق اساتذہ کی جانب سے اپنی تدریسی ذمے داریاں انجام دینے سے رک جانے کی صورت میں اس کی تمام تر ذمے داری حوثی ملیشیا پر عائد ہو گی۔
یاد رہے کہ حوثی ملیشیا اپنے زیر قبضہ علاقوں میں کام کرنے والی تمام تنظیموں کو اپنی ذمے داریاں انجام دینے کی اجازت کے مقابل بلیک میل کرتی ہے۔

About BBC RECORD

Check Also

ولی عہد محمد بن سلمان پاکستان کا دورہ کرنے کے خواہشمند ہیں، سعودی وزیرخارجہ

Share this on WhatsAppریاض: سعودی وزیرخارجہ نے کہا ہے کہ عمران خان کادورہ سعودی عرب ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے