Mohamed Mokhtar Gomaa, the minister of Awqaf (Religious Affairs) Ministry speaks to media in front of Cairo’s Coptic Cathedral after an explosion inside the cathedral in Cairo, Egypt December 11, 2016. REUTERS/Amr Abdallah Dalsh

گرجا گھر پر حملہ دین دشمنی کی بدترین واردات ہے: شیخ الازھر

مصر کی سب سے بڑی دینی درس گاہ جامعہ الازھر کے سربراہ الشیخ احمد الطیب نے کل اتوار کے روز قاہرہ میں ایک چرچ پرہونے والے حملے کی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے دین دشمنی کی بدترین اور نہایت وحشیانہ کارروائی قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ چرچ پر حملہ کرنے والوں کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں ہوسکتا کیونکہ اس اسلام طرح کی مجرمانہ کارروائیوں کی کسی صورت میں اجازت نہیں دیتا ہے۔

خیال رہے کہ اتوار کے روز قاہرہ میں کیتھڈرل چرچ میں ایک دعائیہ تقریب کے اختتام پر ہونے والے بم دھماکوں کے نتیجے میں کم سے کم 25 افراد ہلاک اور 50 زخمی ہوگئے تھے۔

دہشت گردی کی اس بدترین کارروائی کے رد عمل میں جامعہ الازھر کے سربراہ نے کہا کہ معصوم شہریوں کو بم حملوں میں ہلاک کرنا اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ خیانت اور ملک دشمنی ہے۔ انہوں نے مصر کی مسیحی برادری کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کرتے ہوئے مسلمانوں اور عیسائیوں سے اپیل کی کہ وہ دہشت گردوں کے خلاف جاری جنگ میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیں، تاکہ دہشت گردوں کو آئندہ اس طرح کی وارداتوں کا موقع نہ مل سکے۔

علامہ احمد الطیب نے چرچ پرحملے کو وحشیانہ، بزدلانہ اور سنگین مجرمانہ قرار دیتے ہوئے وحشی دہشت گردوں سے آہنی ہاتھوں سے نمٹنے کی ضرورت پر زور دیا۔ ڈاکٹر احمد الطیب کا کہنا تھا کہ مصری مسیحی برادری کا دکھ پوری مصری قوم کا دکھ ہے۔ ہم اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ بددیانتی کے مرتکب عناصر کی مخالفت اور مشکل کی اس گھڑی میں مسیحی برادری کے ساتھ کھڑے ہیں۔

About BBC RECORD

Check Also

ولی عہد محمد بن سلمان پاکستان کا دورہ کرنے کے خواہشمند ہیں، سعودی وزیرخارجہ

Share this on WhatsAppریاض: سعودی وزیرخارجہ نے کہا ہے کہ عمران خان کادورہ سعودی عرب ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے