”عثمان بزدار ساڈا مانڑ اے”

تحریر:محمد جنید جتوئی،ڈپٹی ڈائریکٹر انفارمیشن،ڈی جی خان

پچھلے دنوں عجیب کیفیت اور احساس والے معاملات دیکھنے کو ملے۔ ملک پاکستان کے سب سے بڑے صوبہ پنجاب کے وزیر اعلیٰ آفس میں عوام کا ایک جم غفیر ہے۔ایک شخصیت بڑی عاجزی اور انکساری سے ہر شخص کی نشست پر جاکر مل رہی ہے جیسے ہر شہری اس کیلئے سب سے زیادہ عزیز ہو۔ وہ ہر بات غور سے سننے کے ساتھ خود نوٹ کرکے احکامات بھی دے رہے ہیں۔بزرگ،چھوٹا بڑا ہر فرد بے باکی سے ان سے مل رہا ہے جیسے وہ بھی ان کیلئے سب سے پیارا اور عزیز ہو۔یہ وہ عہدہ رکھنے والی شخصیت ہیں جو آج سے تین سال قبل کسی بھی شہری تو دور کی بات کسی وزیر اور مشیر کے لئے اس بے باکی سے ملنے کا تصور نہیں کیا جاتا تھا۔جی ہاں یہ ہیں ملک پاکستان کے سب سے بڑے صوبہ پنجاب کے وزیر اعلیٰ سردار عثمان احمد خان بزدار، جو دوسروں کو عزت وتکریم دے رہے ہیں اور ایسے لگتا ہے ہر شخص اس کیلئے بڑے عہدے کا حامل ہے۔سردار عثمان احمد خان بزدار عوام کو اپنے پاس بلانے کی بجائے خود چل کر ان کی نشستوں پر جارہے ہیں۔ان سے ”حال احوال”کرنے کے ساتھ مسائل خود نوٹ کررہے ہیں۔ سردار عثمان احمد خان بزدار عوامی درد دل رکھنے والے وزیر اعلی ہیں۔انہوں نے اپنے دور حکومت نے نہ صرف محروم علاقوں کادورہ کیا بلکہ بغیر کسی پروٹوکول وہ صوبہ کے ہر علاقے کا دورہ کررہے ہیں تاکہ 74 سالہ عوامی محرومی کو ختم کیا جاسکے۔

وزیر اعلی پنجاب سردار عثمان احمد خان بزدار سے ایک بزرگ خاتون بھی ملنے آئی اس نے سردار عثمان احمد خان بزدار کو گلے لگاتے ہوئے کہا کہ شکریہ بیٹا……جیتے رہو“، ”عثمان بزدار تو ں ساڈا مانڑ ایں“، بزرگ خاتون نے وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار سے ملاقات کے دوران دعائیں دیں۔ وزیر اعلیٰ عثمان بزدار نے بزرگ خاتون سے حال احوال کیا۔ بزرگ خاتون نے وزیراعلیٰ عثمان بزدار کو تفصیل سے مسائل سے آگاہ کیا وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے مسائل غور سے سنے اور فوری اپنے سٹاف کو طلب کیا اور مسائل کے حل کیلئے موقع پر ہی احکامات جاری کئے۔ وزیراعلیٰ عثمان بزدار کو بزرگ خاتون نے دعائیں دیں اور گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ”عثمان بزدار تیکوں وزیر اعلیٰ ڈیکھ کے میڈا ہاں ٹھر گیا اے“۔ ”تینوں رب دیاں رکھاں“۔ وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ آپ میرے لئے قابل احترام ہیں۔ آپ کے مسائل نوٹ کر لئے ہیں اور ان کے حل کیلئے ہدایات بھی دے دی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پسماندہ علاقے کے لوگ میرے دل کے قریب ہیں اور عوام کی خدمت کرکے دلی سکون ملتا ہے۔وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے کہا کہ میرا تعلق پسماندہ علاقے سے ہے اور میں آپ کے مسائل کا ادراک رکھتا ہوں۔

وزیر اعلی پنجاب سردار عثمان احمد بزدار نے گزشتہ روز بھی عوامی خدمت کی نئی مثال قائم کرتے ہوئے بلا تعطل 4گھنٹے تک 400سے زائد لوگوں کے مسائل سنے -وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے مسائل کے حل کیلئے موقع پر ہی متعلقہ حکام کو ہدایات دیں -وزیراعلیٰ عثمان بزدار خود لوگوں کی نشست پر گئے،ان سے حال احوال کیا اور مسائل پوچھے-لوگوں نے وزیراعلیٰ عثمان بزدار کے عوامی خدمت کے جذبے کوسراہا-لوگوں نے وزیراعلیٰ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ آپ نے ہمارے مسائل اپنے سمجھ کر حل کئے ہیں -ماضی میں وزیراعلیٰ سے ملنا تو دورکی بات تھی، وزیراعلیٰ آفس کے دروازے بھی ہم جیسے لوگوں کیلئے بند تھے- مسائل کے حل کے لئے عوام سے براہ راست ملنا آپ کا احسن اقدام ہے- آپ انتہائی محنت،لگن او ر جذبے کے ساتھ عوام کی خدمت کررہے ہیں -وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ عوام ہی میرا سب کچھ ہیں -صوبے کے عوام کے مسائل حل کرنا میرا مشن ہے-میں لاہور میں آپ لوگوں کا
وکیل ہوں -اللہ تعالیٰ نے عوامی مسائل حل کرنے کے لئے ہی وزارت اعلیٰ کامنصب عطا کیا ہے -عوام کی خدمت سے ہمیں کوئی نہیں روک سکتا – ماضی میں وسائل کو جان بوجھ کر مخصوص شہروں تک محدود رکھا گیا۔ترقی کے سفر میں رکاوٹیں کھڑی کرنے والے عناصر قصہ پارینہ بن چکے ہیں -انہوں نے کہاکہ ماضی میں ترقی سے محروم رکھے گئے شہر اب ترقی کے سفر میں شامل ہوچکے ہیں – پسماندہ عوام کے مسائل حل کرنے تک چین سے نہیں بیٹھیں گے-پسماندہ علاقوں میں ترقیاتی منصوبوں کی تکمیل سے حقیقی تبدیلی آئے گی۔ وسائل کا رخ محروم علاقوں کی جانب موڑا ہے۔ پنجاب کی تاریخ میں پہلی بار دوردراز علاقوں میں ترقی کا سفر پہنچا ہے،یہ سفر رکے گا نہیں بلکہ مزید تیز ہو گا۔

وزیر اعلی پنجاب سردار عثمان احمد خان بزدار عوامی درد دل رکھنے والے انسان ہیں ان کی کوشش ہوتی ہے کہ عام آدمی کو ریلیف مل سکے جس کیلئے وہ بغیر پروٹوکول شہر اور مضافات کا دورہ کرتے رہتے ہیں تاکہ عوامی مسائل کا خود جائزہ لے سکیں اور وہ مسائل کا ادراک کرکے ان کا حل بھی تلاش کرتے ہیں۔ان کے دوروں میں جیل،دارالامان،ہسپتال اور یتیم خانہ کا معائنہ شامل ہوتا ہے کیونکہ یہی وہ جگہیں ہیں جہاں معاشرہ کے ستائے افراد ہوتے ہیں۔وزیر اعلی پنجاب سردار عثمان احمد خان بزدار نے غریب عوام کے مسائل کا ادراک کرتے ہوئے پناہ گاہ اور لنگر خانے قائم کرائے۔یتیم اور بے سہارا بچوں کی تعلیم و تربیت کیلئے دارالاطفال پر توجہ دی۔دارالامان اور جیلوں میں سہولیات کو فوکس کیا۔ہسپتالوں میں ضروری اور جدید سہولیات کو مانیٹر کیا۔عوامی مسائل کے حل میں کوتاہی،عدم دلچسپی اور غیر ضروری تاخیر پر افسران کی باز پرس کی۔سرکاری نرخ پر آٹا،دال،چینی چاول اور دیگر اشیائے خوردونوش کی دستیابی یقینی بنانے کیلئے مجسٹریٹس اور انتظامی افسران متحرک کئے۔سبزی منڈیوں میں نیلامی کے عمل کو مانیٹر کرایا۔عوام کے مسائل حل نہ کرنے والے افسران سے عہدے اور اختیارات واپس لئے۔بڑے سے بڑے افسر کے دفتر کے دروازے اوپن ڈور پالیسی کے تحت اوپن رکھے۔ہر ماہ کے پہلے ورکنگ ڈے میں ریونیو عوامی خدمت کھلی کچہریوں کا سلسلہ شروع کرایا تاکہ عوام کو سرکاری دفاتر میں بلانے کی بجائے افسران خود چل کر عوام کے گھروں کے نزدیک جائیں اور ان کے مسائل حل کریں۔پٹواری اپنے بستہ اور ریکارڈ سمیت افسران کے ہمراہ موجود رہتا ہے۔عوام کو تاریخ پر تاریخ دینے کی بجائے موقع پر مسئلہ کا حل تلاش کیا جاتا ہے۔ریونیو عوامی خدمت کھلی کچہریوں میں عوام کے تمام مسائل سنے جاتے ہیں افسران خود درخواستوں کا باقاعدہ فالو اپ لے کر درخواست گزاروں کو فیڈ بیک دیتے ہیں کیونکہ افسران کو معلوم ہے کہ اگر عوام کے مسائل حل نہیں کئے تو وہ وزیر اعلی سردار عثمان احمد خان بزدار کے پاس بغیر کسی روک ٹوک کے جاکر شکایات کرسکتے ہیں کیونکہ سردار عثمان احمد خان بزدار نے وزیر اعلی آفس کے ساتھ وزیر اعلی ہاؤس کے دروازے بھی ہر خاص اور عام کیلئے کھول رکھے ہیں

About BBC RECORD

Check Also

عمران خان کا خواب پنجاب پولیس عوامی پولیس بن چکی ہے ویلڈن انعام غنی

Share this on WhatsAppپنجاب حکومت کی جانب سے آئی جی پنجاب انعام غنی کی تبدیلی ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے