امریکی صدر کا 31 اگست تک افغانستان میں جنگ مکمل کرنے کا اعلان

واشنگٹن: امریکی صدر جو بائیڈن نے کہا ہے کہ امریکا 31 اگست تک افغانستان میں جنگی اہداف حاصل کرلے گا جس کے بعد جنگ مزید جاری نہیں رہے گی اور نہ ہی افغانستان میں مزید امریکی افواج بھیجی جائیں گی۔

جوبائیڈن نے وائٹ ہاؤس میں دفاعی غوروفکر کے لیے مختص ’ایسٹ روم‘ میں ایک تقریب میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ 31 اگست تک جنگ کو سمیٹ دیا جائے گا اور اس کے بعد مزید امریکی افواج کو افغانستان نہیں بھیجا جائے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ افغانستان میں مزید امریکی فوجی رکھنے سے ملک (افغانستان) کے مسائل حل کرنے میں کوئی مدد نہیں ملے گی۔

یہ بات انہوں نے اس وقت کہی ہے جب افغانستان سے امریکی افواج کا انخلا قریباً مکمل ہوچکا ہے اور طالبان کئی علاقوں پر تیزی سے قابض ہوتے جارہے ہیں۔
جوبائیڈن نے کہا کہ میں مزید اگلی نسل کے امریکی فوجیوں کو افغانستان نہیں بھیجنا چاہتا، امریکی افواج اپنے تمام اہداف کو اگلے ماہ کے آخری روز تک حاصل کرلیں گے جو اصل حکمتِ عملی سے بھی کچھ ہفتے پہلے ہی مکمل ہوجائے گا۔

امریکی صدر کا کہنا ہے کہ افغانستان میں امریکی افواج کے حملے اور دوعشرے کی موجودگی کا مقصد امریکی سرزمین پر نائن الیون جیسے کسی دوسرے حملے کو روکنا تھا اور یہ ہدف ہم حاصل کرچکے ہیں۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ 20 سال کے دوران امریکا افغانستان کے لیے جو کچھ کرسکتا تھا اس نے کیا اور اب افغان عوام کو اپنے مستقبل کا فیصلہ ازخود کرنا ہوگا تاہم امریکا افغانستان کی مدد کرتا رہے گا۔صدر بائیڈن نے مزید کہا کہ اب امریکا کو دیگر عالمی چیلنج پر اپنی توجہ مبذول کرنی ہوگی۔

About BBC RECORD

Check Also

چین کینیڈا تنازع ختم ؛ ’گرفتار شہریوں‘ کو رہا کردیا گیا

Share this on WhatsAppبینگ/اوٹاوا: چین اور کینیڈا نے تصفیے کے بعد ایک دوسرے کے 3 ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے