عالمی رہنماؤں کا وبائی امراض سے متعلق بین الاقوامی معاہدے پر زور

عالمی رہنماؤں نے کورونا وائرس جیسے وبائی امراض سے نمٹنے کے لیے بین الاقوامی معاہدہ کرنے پر زور دیا ہے۔خبر رساں ادارے کے مطابق جرمنی کی چانسلر انجیلا میرکل، برطانوی وزیراعظم بورس جانسن اور فرانس کے صدر ایمانوئل میکرون نے وبائی امراض سے متعلق ایک عالمی معاہدے کی ضرورت پر زور دیا۔

فرانس کے صدر ایمانوئل میکرون، جرمن چانسلر انجیلا میرکل اور دیگر رہنماؤں نے کہا کہ اب دنیا کو انتہائی مربوط انداز میں وبائی امراض کی پیش گوئی، روک تھام، پتہ لگانے، اندازہ لگانے اور موثر انداز میں جواب دینے کے لئے بہتر طور پر تیار رہنا چاہئے۔
وبائی امراض سے متعلق عالمی معاہدے کی حمایت کرنے والے گروپ میں وزیر اعظم بورس جانسن بھی شامل ہوگئے ہیں جس میں پہلے ہی 20 سے زیادہ عالمی رہنما موجود ہیں جو ایک نئی عالمی آبادکاری کا مطالبہ کررہے ہیں تاکہ مستقبل میں وبائی امراض کی تیاری میں دنیا کی مدد کی جاسکے۔

ایک اخباری مضمون کے مطابق جرمن چانسلر انجیلا میرکل اور فرانسیسی صدر ایمانوئل میکرون نے کووڈ-19 کو دوسری جنگ عظیم کے بعد سب سے بڑا چیلنج قرار دیا ہے اور ہر کوئی محفوظ ہونے تک کوئی بھی محفوظ نہیں ہے۔ڈیلی ٹیلی گراف اور فرانس میں لی مونڈے اور اسپین میں ال پیس میں شائع ہونے والی تحریروں میں 24 رہنماؤں نے استدلال کیا ہے کہ سرحد پار سے تعاون کو فروغ دینے کے لیے دوسری جنگ عظیم دوم کے بعد ہونے والے معاہدے کی ضرورت ہے۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے سربراہ ڈاکٹر ٹیڈروس ادھانوم گریبیسس نے بھی عالمی معاہدے کی ضرورت پر زورد دیتے ہوئے کہا اس وقت دو عالمی جنگوں کی تباہی کے بعد سیاسی رہنما کثیرالجہتی نظام کو بچانے کے لیے اکٹھے ہوئے ہیں۔عالمی رہنماؤں کا یہ بھی کہنا ہے کہ ہمارے مقاصد واضح ہیں، وبا کے خلاف تمام ممالک کو اکٹھا کرنا ، تنہائی اور قوم پرستی کے لالچوں کو دور کرنا اور ان چیلنجوں جیسے امن، خوشحالی، صحت اور سلامتی سے نمٹنا جو صرف یکجہتی اور تعاون کے جذبے کے تحت حاصل ہوسکتے ہیں۔

About BBC RECORD

Check Also

چین کینیڈا تنازع ختم ؛ ’گرفتار شہریوں‘ کو رہا کردیا گیا

Share this on WhatsAppبینگ/اوٹاوا: چین اور کینیڈا نے تصفیے کے بعد ایک دوسرے کے 3 ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے