ترکی کی نظریں لیبیا کے کن فوجی اڈوں پر ہیں ؟

گذشتہ دنوں کے دوران ترکی کی نظریں لیبیا میں الوطیہ کے فضائی اڈے اور مصراتہ کی بندرگاہ پر مرکوز رہی ہیں۔ انقرہ لیبیا کی اراضی میں اپنے توسیعی منصوبے کے سلسلے میں یہاں دو فوجی اڈے قائم کرنے کا خواہاں ہے۔ یہ پیش رفت شمالی افریقا اور بحیرہ روم کے جنوب کے علاقوں میں ترکی کے عسکری وجود کو مضبوط بنانے کے منصوبوں کی ایک کڑی ہے۔اس سے پہلے ایک ترک ذمے دار روئٹرز نیوز ایجنسی کو یہ باور کرا چکا ہے کہ انقرہ اور لیبیا کی وفاق حکومت کے درمیان ترکی کی جانب سے دو فوجی اڈوں کے استعمال کا امکان زیر بحث آ رہا ہے۔ ان میں پہلا مقام مصراتہ کی سمندری بندرگاہ اور دوسرا مقام الوطیہ کا فضائی اڈہ ہے۔

اس حوالے سے لیبیا کے ایک رکن پارلیمنٹ علی التکبالی نےعربی چینل کو دیے گئے بیان میں کہا کہ جب تک فائز السراج کی سربراہی میں وفاق حکومت لیبیا کی قیادت کر رہی ہے ، اس وقت تک ترکی ان دونوں مقامات پر تزویراتی اڈے قائم کرنے میں کامیاب رہے گا اور انہیں لیبیا کے اندر اپنی حرص پر مبنی خواہشات پوری کرنے میں استعمال کرے گا۔

التکبالی کے مطابق لیبیا میں ترکی کی جانب سے جاری مداخلت "ایک بڑی سازش” ہے۔ لیبیا کے خلاف اس سازش کی باگ ڈور انقرہ کے ہاتھ میں ہے۔ اس سازش کا ایک اہم حصہ دہشت گردوں کی لیبیا منتقلی ہے۔ التکبالی نے اس بات پر حیرت کا اظہار کیا کہ ترکی لیبیا میں جو کچھ کر رہا ہے ،،، امریکا اور یورپ نے اس پر آنکھیں بند کر رکھی ہیں۔ ترکی روزانہ کی بنیاد پر ہتھیاروں ، دہشت گردوں اور اجرتی قاتلوں کو لیبیا منتقل کر رہا ہے۔ لیبیا کے امور میں کھلی مداخلت وہاں کے عوام اور پوری دنیا کے لیے چیلنج ہے۔

ترکی کی حمایت یافتہ وفاق حکومت کے زیر کنٹرول الوطیہ کا فضائی اڈہ لیبیا کے مغرب میں اہم ترین فضائی اڈوں میں شمار ہوتا ہے۔ یہ دارالحکومت طرابلس سے 140 کلو میٹر اور تونس کی سرحد سے 27 کلو میٹر کی دوری پر واقع ہے۔ اس اڈے کا رقبہ 50 مربع کلو میٹر ہے اور یہاں 7000 فوجیوں کی گنجائش ہے۔ اس میں ایک فوجی ہوائی اڈہ بھی شامل ہے۔

جہاں تک مصراتہ کی بندرگاہ کا تعلق ہے تو یہ لیبیا میں اہم ترین سمندری گزر گاہوں میں سے ہے۔ یہ یورپ اور المغرب العربی کے ممالک سے قریب اہم تزویراتی محل وقوع کی حامل ہے۔ یہ ان اہم ترین سرحدی گزر گاہوں میں رہی ہے جن کو ترکی نے وفاق حکومت کی فورسز کے واسطے ہتھیاروں اور شامی جنگجوؤں کو غیر قانونی طور پر پہنچانے کے واسطے استعمال کیا۔

About BBC RECORD

Check Also

امریکا؛ نئی حکومت کی شعبہ اطلاعات کی ٹیم کے تمام عہدے خواتین کو تفویض

Share this on WhatsAppبی بی سی ریکارڈ لندن نیوز؛ واشنگٹن امریکی صدارتی الیکشن میں کامیاب ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے