ایران کرونا وائرس کے سبب شام سے نکل سکتا ہے: برائن ہُک

امریکی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ ایران کرونا وائرس کے پھیلاؤ کے سبب شام سے نکل سکتا ہے۔ایرانی امور کے لیے امریکا کے خصوصی نمائندے برائن ہُک کے مطابق ایران کے پاس شام سے انخلا کی اب زیادہ وجوہات موجود ہیں۔امریکی جریدے Foreign Policy کو دیے گئے ایک خصوصی انٹرویو میں ہک کا کہنا تھا کہ امریکا کو شام میں ایرانی فورسز کا تدبیری انخلا نظر آ رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ تہران کا ایجنٹوں کے ذریعے مشرق وسطی میں جنگ کا جوش حالیہ عرصے میں ماند پڑا ہے۔ بالخصوص جب کہ ایران میں اب تک کرونا وائرس سے 7 ہزار سے زیادہ افراد موت کا شکار ہو چکے ہیں۔ امریکی ذمے داران سمجھتے ہیں کہ اموات کی حقیقی تعداد اس سے کہیں زیادہ ہو سکتی ہے۔ادھر امریکی وزارت خارجہ کی ترجمان مورگن اورٹاگوس کا کہنا ہے کہ ایران کے خلاف انتہائی دباؤ کی پالیسی کا مقصد اسے مجبور کرنا ہے کہ وہ عام ریاست کی طرح برتاؤ کرے اور بات چیت میں شرکت کو قبول کرے۔ ترجمان نے باور کرایا کہ گیند اب ایران کے کورٹ میں ہے۔

اورٹاگوس نے "ايران انٹرنیشنل” کے ساتھ انٹرویو میں کہا کہ امریکا انسانی عزت نفس پر توجہ دینے والے ممالک سے چاہتا ہے کہ وہ ایران کے خلاف پابندیوں میں شامل ہو جائیں اور اس کے ساتھ درگزر کا معاملہ نہ کریں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ایرانی عوام کو یہ جان لینا چاہیے کہ امریکا ان کے شانہ بشانہ ہے اور ان کی حمایت جاری رکھے گا۔ امریکا نے جب بھی انسانی حقوق کی پامالی دیکھی تو وہ ایرانی نظام سے نمٹے گا۔

About BBC RECORD

Check Also

حشد الشعبی امریکہ کے کسی بھی ممکنہ حملے کا جواب دینے کے لئے تیار ہے

Share this on WhatsAppعراق کی رضاکار فورس الحشد الشعبی نے اعلان کیا ہے کہ وہ ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے