امریکی بحری اڈے پر فائرنگ کرنے والے سعودی رنگروٹ القاعدہ کا دہشت گرد تھا؛ امریکی ایف بی آئی

بی بی سی ریکارڈ لندن نیوز؛ امریکہ
وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف بی آئی) نے گذشتہ سال دسمبر میں فلوریڈا میں واقع ایک بحری اڈے پر فائرنگ کرنے والے سعودی عرب کی شاہی فضائیہ کے رنگروٹ کے آئی فون کا توڑ کر کے ڈیٹا حاصل کر لیا ہے اور اس کو اس فون سے سعودی رنگروٹ کے القاعدہ سے تعلق کےشواہد ملے ہیں۔سعودی سیکنڈ لیفٹیننٹ محمد الشامرانی نے 6دسمبر2019ء کو فلوریڈا میں واقع امریکی فوج کے ایک بحری اڈے پر فائرنگ کرکےتین فوجیوں کو ہلاک کردیا تھا۔ اس کی فائرنگ سے آٹھ افراد زخمی ہوگئے تھے۔اس کو امریکا کے قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکاروں نے بعد میں گولی مار کر ہلاک کردیا تھا۔وہ امریکی بحریہ کے تربیتی پروگرام کے تحت اپنے دیگر سعودی ساتھیوں کے فوجی تربیت کے لیے وہاں گیا تھا۔

امریکا کے اٹارنی جنرل ولیم بار نے سوموار کو ایک نیوز کانفرنس میں بتایا ہے کہ ایپل کمپنی نے اس سعودی رنگروٹ کے آئی فون کو کھولنے سے انکار کردیا تھا لیکن محکمہ انصاف نے اس میں کامیابی حاصل کر لی ہے جبکہ ایپل نے اٹارنی جنرل کے اس بیان کی تردید کی ہے اور کہا ہے کہ جہاں تک ٹیکنالوجی اجازت دیتی تھی،اس نے قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ساتھ تعاون کیا ہے۔

واضح رہے کہ فروری میں دہشت گرد گروپ القاعدہ نے آن لائن ایک آڈیو ریکارڈنگ جاری کی تھی اور اس میں فلوریڈا میں بحری اڈے پر حملے کی ذمے داری قبول کرنے کا دعویٰ کیا تھا لیکن اس کا کوئی ثبوت فراہم نہیں کیا تھا۔سعودی شوٹر نے فوجی اڈے پر فائرنگ سے قبل سوشل میڈیا پر امریکا کی جنگوں کو تنقید کا نشانہ بنایا تھا اور دہشت گرد تنظیم القاعدہ کے دہشت گرد ہلاک شدہ لیڈر اسامہ بن لادن کے بعض باتیں نقل کیے تھے۔ایف بی آئی کے ڈائریکٹر کرسٹوفر رے کا کہنا ہے کہ پینسکولا اڈے پر حملہ دراصل برسوں کی منصوبہ بندی کا شاخسانہ تھا اور شواہد سے یہ پتا چلتا ہے کہ الشامرانی 2015ء سے دہشت گرد تنظیم القاعدہ سے جڑ گیا تھا۔

About BBC RECORD

Check Also

وزیراعظم پاکستان نے گستاخانہ خاکوں کا معاملہ اقوام متحدہ میں اٹھادیا، اسلامو فوبیا کیخلاف یوم منانے کا مطالبہ

Share this on WhatsAppڈاکٹر زولفقار کاظمی بی بی سی ریکارڈ لندن نیوز؛ اسلام آباد پاکستان ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے