لیبیا میں‌فوجی مداخلت کا منصوبہ ساز ترکی میں چیف آف اسٹاف تعینات

ترکی کے صدر رجب طیب ایردوآن نے لیبیا اور ترکی کے مابین سرحدی حد بندی کے معاہدے اور لیبیا میں فوجی مداخلت کے منصوبہ سازنیول چیف ایڈمرل جہاد یائجی کو ‘چیف آف اسٹاف’ کیا ہے۔ خیال رہے کہ ایڈمرل یائجی نے ترکی اور لیبیا کی قومی وفاق حکومت کےدرمیان بحری حدود کا ایک معاہدہ کرانے ساتھ ساتھ لیبیا میں قومی وفاق کےدفاع کے لیے فوجی مداخلت میں اہم کردار ادا کیا تھا۔

یہ بات ترکی کے سرکاری اخبار کے ذریعہ جمعہ کے روز شائع ہونے والے ایک فیصلے میں سامنے آئی ہے ، جس میں کہا گیا ہے کہ ترک فوج میں نیول فورس سربراہ کو جہاد یائجی کو چیف آف اسٹاف تعینات کردیا گیا ہے۔جہاد یائجی کو لیبیا میں ترکی کی مداخلت کا سب سے اہم انجینیر اور حامی سمجھا جاتا ہے۔ وہ ترکی اور لیبیا کے مابین متنازعہ سرحدی حد بندی کے معاہدے کے بھی اہم منصوبہ ساز ہیں۔ یہ معاہدہ ترکی کی حکومت اور لیبیا کی قومی وفاق حکومت کے سربراہ فائز السراج کے درمیان گذشتہ برس نومبر میں طے پایا تھا۔

یائجی "بحیرہ روم سے ترکی کے پڑوسی لیبیا” کتاب کے مصنف ہیں۔ انہوں نے اس کتاب میں مشرقی بحیرہ روم میں واقع قدرتی وسائل میں انقرہ کے عزائم کا انکشاف کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ مشرقی بحیرہ روم میں قدرتی گیس کے ذخائر کی مالیت 3 کھرب امریکی ڈالر ہے۔ قدرتی گیس کا یہ ذخیرہ ترکی کی گیس کی ضروریات 572 کے لیے کافی ہیں جب کہ یورپ کے لیے 30 سال کا ذخیرہ ہے۔یوریشیا سینٹر برائے اسٹریٹیجک اسٹڈیز کے ذریعہ شائع ہونے والی اپنی کتاب میں یائجی نے مشرقی بحیرہ روم کے خطے میں اثر و رسوخ کے سمندری حصوں میں لیبیا کے کردار کا جائزہ لیا۔

About BBC RECORD

Check Also

وزیراعظم پاکستان نے گستاخانہ خاکوں کا معاملہ اقوام متحدہ میں اٹھادیا، اسلامو فوبیا کیخلاف یوم منانے کا مطالبہ

Share this on WhatsAppڈاکٹر زولفقار کاظمی بی بی سی ریکارڈ لندن نیوز؛ اسلام آباد پاکستان ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے