جیل میں قیدیوں پر تشدد، اسلام آباد ہائیکورٹ برہم

اسلام آباد ہائیکورٹ نے جیل قیدیوں کے رولزپر عمل درآمد کیس کی سماعت کی۔ حکومت پنجاب کے وکیل نے بتایا کہ وزیر اعلیٰ عثمان بزدار نے قیدیوں کے رولز پرعمل درآمد کےلئے اقدامات اٹھانے کی ہدایت کی ہے۔چیف جسٹس اطہرمن اللہ نے کہا کہ قیدی کوجیل میں سزا کے لیے بھیجا جاتا ہے ٹارچر کے لیے نہیں، جیلوں میں گنجائش سے زیادہ قیدیوں کی وجہ سے بھی مسائل پیدا ہوتے ہیں، قیدی بیماری کی حالت میں جیل میں رہنے کے قابل نہ ہو توباہر سے علاج کرانا ضروری ہے، شدید بیمارقیدیوں کے حوالے سے حکومت کے پاس ازخود نوٹس کا اختیارہے، سزائے موت کے قیدی کی سزا پرعمل تک زندہ رہنے کے بھی حقوق ہیں۔

وزارت داخلہ نے تمام صوبوں سے رپورٹس لیکر جمع کرانے کے لیے وقت دینے کی استدعا کی تو عدالت نے ایک ماہ میں جیل رولز پرعمل درآمد کے حوالے سے رپورٹس جمع کرانے کی ہدایت کردی۔چیف جسٹس نے ایڈیشنل اٹارنی جنرل پنجاب چوہدری فیصل کو ہدایت کی کہ تمام آئی جیز سے رپورٹ منگوا کر آئندہ سماعت پر جمع کرائیں۔ عدالت نے کیس کی مزید سماعت 3 دسمبر تک ملتوی کردی۔ عدالت نے نوازشریف کی درخواست ضمانت کے فیصلے میں جیل رولز پرعمل درآمد کا حکم دیا تھ

About BBC RECORD

Check Also

پاکستان کااگلا وزیراعظم کون؟ سہیل وڑائچ کا تہلکہ خیز انکشاف

Share this on WhatsAppپاکستان کی 72سالہ تاریخ اٹھا کر دیکھ لیں، آج تک جتنے منتخب ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے