جہاز رانی میں رکاوٹ ایران کو مہنگی پڑے گی: برطانیہ

برطانوی وزیر خارجہ جیریمی ہنٹ نے ایران کی جانب سے برطانیہ کا تیل بردار بحری جہاز قبضے میں لینے کے اقدام کے بعد تہران کو اس کے سنگین نتائج پر خبردار کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ تیل بردار جہاز کو قبضے میں لینا معمولی بات نہیں۔ ایران کو اس کی بھاری قیمت چکانا پڑ سکتی ہے۔

برطانوی وزیر خارجہ نے کہا کہ ایران کی جانب سے تیل بردار جہاز قبضے میں لینے کے بعد لندن سوچ سمجھ کر مگر کوئی ٹھوس لائحہ عمل اختیارکرے گا۔ انہوں‌ نے ایران کو خبردار کیا کہ عالمی جہاز رانی میں رکاوٹ ڈالنے سے تہران کو نقصان پہنچے گا۔

قبل ازیں برطانوی وزیر خارجہ نے اپنے امریکی ہم منصب مائیک پومپیو سے بھی ٹیلیفون پر بات چیت کی اور انہیں صورت حال سے آگاہ کیا۔ توقع ہے کہ وہ اپنےایرانی ہم منصب محمد جواد ظریف سے بھی رابطہ کریں گے۔

جیریمی ہنٹ کا کہنا تھا کہ تیل بردار جہاز روکنے کے بعد ایران کے خلاف ہم سوچ سمجھ کر مگر ٹھوس رد عمل ظاہر کریں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم ایران کے خلاف کسی قسم کی فوجی مہم جوئی کے حق نہیں اور مسائل کو بات چیت اور سفارتی ذرائع سے حل کرنا چاہتے ہیں۔ اس کے باوجود اگر ایران نے عالمی جہاز رانی کی راہ میں رکاوٹ ڈالنے کی کوشش کی تو سب سے زیادہ نقصان ایران کا ہوگا۔

برطانوی حکومت نے جمعہ کی شام ایک بیان میں آبنائے ہرمز میں اپنا ایک تیل بردار جہاز ایرانی تحویل میں لیے جانے کی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے غیر معقول اور انتہائی تشویشناک اقدام قرار دیا۔

جمعہ کو ایرانی ٹی وی چینل پر نشر ایک خبر میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ پاسداران انقلاب نے آبنائے ہرمز میں بین الاقوامی جہاز رانی کے قواعد کی خلاف ورزی کرنے والے برطانیہ کے ایک تیل بردار جہاز کو روکا گیا ہے۔

About BBC RECORD

Check Also

چینی قرضوں میں دبے جنوبی ایشیائی ممالک کی نظریں بھارت کی جانب

Share this on WhatsAppسری لنکا اور مالدیپ جیسے جنوبی ایشیائی ممالک نے گزشتہ دہائی کے ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے