ترکی کو F 35 امریکی طیاروں کی فروخت بند، ترک ہواباز بیدخل

امریکا نے کہا ہے کہ وہ ترکی کو ایف – 35 طرز کے جدید لڑاکا طیارے کبھی فروخت نہیں کرے گا اور نہ ہی انقرہ کو ان طیاروں کو دینے سے متعلق پروگرام میں شرکت کا کوئی اختیار حاصل ہو گا۔اس فیصلے کی وجہ انقرہ کا ایس – 400 طرز کے روسی ساختہ میزائل شکن سسٹم کی خریداری ہے کیونکہ اس سسٹم کو جدید امریکی لڑاکا جہاز اہم فنی راز چرانے کے لئے استعمال کیا جا سکتا ہے۔

وائٹ ہاؤس کی ترجمان سٹیفنی گریشم نے کہا کہ ’’افسوس کی بات ہے کہ روسی ساختہ ایس– 400 ائر ڈیفنس سسٹم خریدنے کے بعد انقرہ کا ایف – 35 طرز کے لڑاکا پروگرام میں شرکت ناممکن ہو گئی ہے۔تاہم ترجمان کے بقول امریکا، ترکی سے دیگر معاملات میں تعاون جاری رکھے گا، تاہم اس تعاون کا دائرہ ان حدود وقیود میں ہو گا جو ایس–400 طرز کے روسی دفاعی سسٹم کی موجودگی سے ہم آہنگ ہو۔

ادھر امریکی محکمہ دفاع ’پینٹاگان‘ نے اعلان کیا ہے کہ ترکی کو ایف – 35 لڑاکا طیاروں کے پروگرام سے نکالنے کی کارروائی کا آغاز ہو گیا ہے۔ پینٹاگان کے مطابق نیٹو کی رکنیت سے متعلق امور کا فیصلہ خود نیٹو کرے گا۔
ہوا بازوں کی بیدخلی امریکا نے F-35 طرز کے لڑاکا جہازوں پر تربیت حاصل کرنے والے دو ترک ہوابازوں سے کہا ہے کہ وہ 31 جولائی ملک سے چلے جائیں کیونکہ واشنگٹن نے نیٹو کے رکن ملک ترکی کو اس پروگرام سے باہر نکالنے کے منصوبے کا آغاز کرنا ہے۔

About BBC RECORD

Check Also

مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر سلامتی کونسل کا ہنگامی اجلاس طلب

Share this on WhatsAppنیویارک: مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے