قطر کی بحرین کے انتخابات پر اثرانداز ہونے کی سازش ناکام

دبئی: قطر کی پولیس نے دو مشتبہ افراد کو ملک کے مفادات کے خلاف اور انتخابات پراثر انداز ہونے کی کوشش کے الزام میں حراست میں لیا ہے۔ بحرین کے پراسیکیوٹر جنرل کا کہنا ہے کہ دونوں ملزمان نے مقامی سطح پر فنڈز حاصل کرنے کے ساتھ ساتھ قطر کی ایک سرکردہ حکومتی شخصیت سے بھی رقوم حاصل کی تھیں۔

بی بی سی ریکارڈ لندن نیوز: کے مطابق قطری حکومت کے سابق وزیر عبداللہ بن خالد آل ثانی کی جانب سے ملزمان کو رقوم فراہم کی گئیں تاکہ بحرین کے مفادات کے خلاف سرگرمیوں اور انتخابات پر اثر نداز ہو کر منامہ کو نقصان پہنچایا جاسکے۔

دونوں افراد کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی شروع کردی گئی ہے۔ ان پر بیرون ملک سے غیرقانونی طریقے سے رقوم حاصل کرنے، ملکی مفادات کے خلاف کام کرنے اور مجاز اتھارٹی کی اجازت کے بغیر فنڈز جمع کرنےسمیت کئی دوسرے الزامات بھی عاید کیے گئے ہیں۔ مقامی ذرائع ابلاغ کے مطابق ملزمان میں سے ایک نے قطری مدد کے تحت بحرین میں رواں سال ہونے والے پارلیمانی انتخابات میں حصہ لینے کی بھی کوشش کی تھی اور اپنی انتخابی مہم کے لیے فنڈز قطر سے حاصل کیے تھے۔

زیرحراست ملزمان سے تفتیش کے دوران معلوم ہوا ہے کہ دونوں ملزمان بیرون ملک سے فنڈنگ کے بعد ملکی مفادات کے لیے کام کررہے تھے۔ دوسری جانب قطر نے اپنی مخصوص لابی کے ذریعے بحرین کے اندرونی معاملات میں مداخلت کی پوری کوشش کی ہے۔ قطر کی طرف سے مقامی انتخابات پر اثرانداز ہونے کے لیے بھاری رقوم فراہم کیں۔ اس حوالے سے تحقیقات کا دائرہ مزید بڑھا دیا گیا ہے۔

About BBC RECORD

Check Also

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کورونا وائرس کو پھیلا رہے ہیں؛ نینسی پلوسی

Share this on WhatsAppامریکی ایوان نمائندگان کی اسپیکر نینسی پلوسی نے عالمی ادارہ صحت سے ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے