صنعاء: حوثیوں کا مرکزی جیل پر دھاوا ، قیدیوں کی منتقلی

یمن میں باغی حوثی ملیشیا نے اتوار کے روز دارالحکومت صنعاء میں اپنے ہی زیر کنٹرول مرکزی جیل پر دھاوا بول دیا اور گرفتار شدگان اور مُغویوں پر گولیاں چلائیں اور آنسو گیس کے شیل فائر کیے۔
مغوی اور لاپتہ افراد کی ماؤں کی تنظیم نے اپنے ایک ہنگامی بیان میں صنعاء کی مرکزی جیل کے متعدد شعبوں میں حوثی اور معزول صالح کی باغی ملیشیاؤں کے دھاوے کی سخت مذمت کی ہے۔ اس دوران قیدیوں کا محاصرہ کر لیا گیا اور ان تک کھانے پینے کی اشیاء اور دواؤں کی وصولی کو روک دیا۔

علاوہ ازیں بیان میں ہفتے کی شب 24 مغویوں کو نا معلوم مقام پر منتقل کرنے کی بھی مذمت کی گئی ہے۔
مغویوں کی ماؤں کی تنظیم نے تمام مقامی اور بین الاقوامی تنظیموں اور قبائلی عمائدین سے فوری طور پر حرکت میں آنے کی اپیل کی ہے تا کہ حوثیوں کے ہاتھوں ان کے بیٹوں کی منتقلی یا ان کو روپوش کرنے کی کوشش کو روکا جا سکے۔
ذرائع کے مطابق مسلح حوثیوں نے صنعاء کی مرکزی جیل کے اندر دھاوا بولا اور قیدیوں کو منتشر کرنے کے لیے آنسو گیس کے شیل بھی استعمال کیا جس کے نتیجے میں ان میں بعض لوگوں متاثر ہوئے۔

انسانی حقوق کے ذرائع نے بتایا کہ حوثیوں نے ہفتے کی شام 30 قیدیوں کو نامعلوم مقام پر منتقل کیا اور 50 دیگر قیدیوں سے مطالبہ کیا کہ وہ منتقلی کے لیے تیار رہیں۔ تاہم ان قیدیوں نے اس امر کو مسترد کر دیا اور دیگر تمام قیدیوں نے ان کے ساتھ یک جہتی کا اظہار کیا۔ اس کے نتیجے میں حوثیوں نے اتوار کے روز جیل پر دھاوا بول کر قیدیوں کو وحشیانہ حملے کا نشانہ بنایا۔

واضح رہے کہ دارالحکومت صنعاء پر حوثیوں کے قبضے کے بعد سے انہوں نے سیکڑوں سیاسی کارکنان اور صحافیوں کو حراست میں لے رکھا ہے جو حوثی جماعت کے افکار و نظریات کے خلاف ہیں۔ ان افراد پر نہ کوئی الزام عائد کیا گیا ہے اور نہ ان کو عدالت میں پیش کیا جاتا ہے۔

About BBC RECORD

Check Also

ہنڈراس اپنا سفارت خانہ بیت المقدس میں کھولے گا

Share this on WhatsAppہنڈراس کے صدر جووان اورلینڈو ہرنانڈیز کا کہنا ہے کہ ان کا ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے