سعودی عرب : غیر قانونی مقیمین کے خلاف وسیع مہم جاری

سعودی وزارت داخلہ نے انکشاف کیا ہے کہ مملکت میں غیر قانونی مقیمین اور نظامِ اقامہ کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف ملک گیر مہم کے آغاز کے بعد سے اب تک 32 ہزار افراد سعودی عرب سے کوچ کر چکے ہیں۔

مذکورہ مہم سر انجام دینے والی ٹیم کے سربراہ بریگیڈیئر جنرل جمعان الغامدی نے دو روز قبل ایک ٹی وی گفتگو میں بتایا کہ "متعلقہ ادارے مہم کو کامیاب بنانے کے لیے سرگرمِ عمل ہیں۔ مہم کے آغاز کے بعد سے ایک ماہ کے دوران اب تک خلاف ورزی کے مرتکب ایک لاکھ افراد کو پکڑا جا چکا ہے”۔

ادھر ریاض میں مہم کے معاون نگراں کرنل سفر بن دلیم نے خلاف ورزی کے مرتکب تمام افراد سے مطالبہ کیا کہ وہ دی گئی مہلت ختم ہونے سے قبل کوچ کرنے کی اجازت سے فائدہ اٹھائیں۔ کرنل سفر نے باور کرایا کہ "جو کوئی بھی مملکت سے کوچ نہیں کرے گا اس پر تمام ٹیکسز اور جرمانے عائد ہوں گے۔ مطلوب ہونے کے سبب ایسے شخص کو حراست میں رکھا جائے گا”۔

رواں سال مارچ کے اواخر میں شروع ہونے والی ملک گیر مہم کے تحت دی 90 روز کی مہلت ختم ہونے میں اب 50 سے بھی کم دن رہ گئے ہیں۔

وسیع پیمانے پر جاری مہم میں 19 سرکاری ادارے شریک ہیں۔ اس سلسلے میں خلاف ورزی کے مرتکب غیر ملکیوں کے استقبال کے لیے 78 مراکز قائم کیے گئے ہیں جہاں روزانہ بڑی تعداد میں غیر ملکیوں کی آمد کا سلسلہ جاری ہے۔

سعودی حکومت نے مقررہ مہلت کے اندر حکام کے سامنے آ جانے والوں کو تمام تر ٹیکسوں اور جرمانوں سے چھوٹ دے دی ہے.. اور سب سے اہم پہلو یہ ہے کہ مملکت سے کوچ کرنے والوں کے فنگر پرنٹ نہیں لیے جائیں گے۔ اس طرح یہ افراد قاعدے اور نظام کے تحت مستقبل میں کبھی بھی سعودی عرب واپس آ سکیں گے۔

مہم کا بنیادی مقصد اقامہ نظام کے مخالف تقریبا دس لاکھ افراد کو سامنے لانا ہے جن میں 2.85 لاکھ افراد اپنی ملازمتوں سے غائب ہیں۔ چار سال قبل بھی اسی نوعیت کی ایک مہم شروع کی گئی تھی جس کے نتیجے میں 55 لاکھ غیر قانونی مقیم افراد کا کوچ اور ان کے معاملات کی درستی سامنے آئی تھی۔

About BBC RECORD

Check Also

لبنان کو دی جانے والی 105 ملین ڈالر کی امداد کا مستقبل کیا ہوگا؟

Share this on WhatsAppلبنان میں عوامی احتجاج کے نتیجے میں وزیر اعظم سعد حریری کے ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے