عالمی افواج کو شہروں کے اندر لڑائی کی تیاری کرنا چاہیے : امریکی جنرل

واشنگٹن : امریکا کے چیف آف آرمی اسٹاف جنرل مارک میلی کا کہنا ہے کہ عراقی فوج موصل میں داعش تنظیم کے خلاف جن معرکوں میں مصروف ہے وہ شہروں کی جنگوں کا ایسا نمونہ ہے جس کی تیاری مستقبل میں دنیا بھر کی افواج کو کرنا چاہیے۔
میلی کے مطابق عالمی افواج کو مستقبل میں گوریلا جنگ لڑنے کے واسطے تیاری کرنا چاہیے۔ داعش کے خلاف عراقی فوج کے معرکوں کے علاوہ حلب پر کنٹرول کے لیے شامی فوج کی لڑائی اُن جنگوں کا نمونہ ہے جو آئندہ سے دنیا بھر میں افواج کو لڑنا ہوں گی۔
واشنگٹن میں ایک کانفرنس کے دوران جنرل میلی نے واضح کیا کہ آبادی کی نمُو اور گنجان آباد شہروں کی تعداد میں اضافے کے سبب افواج پر لازم ہے کہ وہ اپنی عسکری حکمت عملی کو تبدیل کریں تاکہ اُن غلطیوں سے بچا جاسکے جن کا نتیجہ بے قصور افراد کی ہلاکت اور شہروں کے انفرا اسٹرکچر کی تباہی کی صورت میں سامنے آتا ہے۔
امریکی عسکری ذمے دار نے توقع ظاہر کی کہ عالمی افواج ٹینکوں اور ہیلی کاپٹروں کے حجم اور وزن کا از سر نو جائزہ لینے پر مجبور ہوں گی.. بلکہ افواج پر لازم ہے کہ وہ اپنے اسلحے خانے کو مکمل طور پر از سر نو ترتیب دیں تاکہ آئندہ ہونے والے معرکوں کے موافق ہوں اور ضمنی خسارے سے زیادہ سے زیادہ گریز کیا جا سکے۔
جنرل میلی کے مطابق فوج کے اہل کاروں کو گوریلا جنگ کی تربیت دینا ہو گی جو ماضی میں سرکاری افواج کی کمزوری کا نقطہ شمار کیا جاتا رہا ہے۔

About BBC RECORD

Check Also

کوئٹہ صدیق اکبر ریلی میں دھماکہ 22 افراد جانبحق 35 زخمی

Share this on WhatsAppبی بی سی ریکارڈ لندب نیوز ؛ کوئٹہ پریس کلب کے قریب ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے